پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کے چیئرمین کے لیے حکومت اور اپوزیشن کا شہباز شریف کے نام پراتفاق


اسلام آباد: حکومت اور اپوزیشن کے درمیان قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر شہباز شریف
 کو پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کا چیئرمین بنانے پر اتفاق ہوگیا۔

پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کی چیئرمین شپ کے حوالے سے گزشتہ 3 ماہ سے حکومت اور اپوزیشن میں ڈیڈ لاک برقرار تھا اور حکومت نے بطور چیئرمین شہباز شریف کی نامزدگی کو مسترد کردیا تھا جب کہ اس حوالے سے وزیراعظم عمران خان نے بھی کہا تھا کہ شہبازشریف کو چیئرمین پی اے سے کسی صورت نہیں بنائیں

ہم آج قومی اسمبلی اجلاس کے دوران حکومت نے شہباز شریف کو پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کے چیئرمین کی نامزدگی کا اختیار دے دیا تھا۔

جس کے بعد حکومتی اور اپوزیشن وفد میں ملاقات ہوئی جس کے دوران اس بات پر اتفاق کرلیا گیا کہ شہباز شریف چیئرمین پبلک اکاونٹس کمیٹی ہوں گے۔

ن لیگ کے آڈٹ اعتراضات کیلئے خصوصی کمیٹی بنے گی

حکومتی وفد میں شامل وزیر دفاع پرویز خٹک کا کہنا تھا کہ مسلم لیگ (ن) کے آڈٹ اعتراضات کا جائزہ لی کے لیے خصوصی کمیٹی بنےگی، جس کے سربراہ کا تعلق تحریک انصاف سے ہوگا۔

اس موقع پر ایک صحافی نے وزیر دفاع سے سوال کیا کہ ‘وہ کون سی مجبوریاں تھیں کہ اپوزیشن کا مطالبہ ماننا پڑا؟’ جس پر پرویز خٹک نے جواب دیا کہ ‘مجبوریاں نہیں ہوتیں لیکن ایوان کو چلانا تھا’۔

پرویز خٹک نے مزید کہا کہ ‘روایت تسلیم کرتے ہوئے اپوزیشن لیڈر کو چئیرمین پی اےسی مانا ہے’۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں